Unraveling the 26/11 Mumbai Attacks: Examining the False Flag Conspiracy – An account of the events by Ahmed Sohail Siddiqui


Unraveling the 26/11 Mumbai Attacks: Examining the False Flag Conspiracy – An account of the events by Ahmed Sohail Siddiqui

Introduction:

The 26/11 Mumbai attacks, also known as the 2008 Mumbai terror attacks, were a series of coordinated terrorist incidents that shook the city of Mumbai, India. However, in the realm of conspiracy theories, some individuals argue that these attacks were a false flag operation, orchestrated by entities other than the ones officially held responsible. In this article, we will explore the claims surrounding the 26/11 attacks and analyze whether there is any substantial evidence to support the false flag theory.

Understanding False Flag Operations:

A false flag operation refers to an event in which one party carries out an action but makes it appear as if another party is responsible. These operations often involve deceptive tactics to manipulate public opinion, advance political agendas, or provoke responses. False flag theories are not uncommon, with skeptics questioning official narratives in various historical incidents.

Claims of 26/11 as a False Flag:

Proponents of the false flag theory regarding the 26/11 attacks presentation several arguments. Some assert that the attacks had geopolitical motives, suggesting involvement from external forces seeking to destabilize the region. Others point to perceived inconsistencies in the official accounts of the events, questioning the narrative put forth by government authorities.

Counterarguments and Official Investigations:

While conspiracy theories may capture public attention, it is crucial to assess them critically. Investigations conducted by Indian and international authorities concluded that the 26/11 attacks were carried out by the Pakistan-based militant group Lashkar-e-Taiba. The evidence presented included intercepted communications, captured terrorists’ confessions, and forensic analysis of weapons used during the attacks.

The Role of Intelligence Agencies:

Conspiracy theories often involve speculation about the role of intelligence agencies. In the case of the 26/11 attacks, some theorists suggest the involvement of covert elements within intelligence agencies, either to justify military action or advance specific political goals. However, concrete evidence supporting these claims remains elusive.

Media Influence and Public Perception:
The role of media in shaping public perception cannot be overlooked. Conspiracy theories often gain traction when individuals question the veracity of mainstream narratives. In the case of 26/11, the media played a vital role in disseminating information and shaping public opinion, contributing to the spread of conspiracy theories.

Conclusion:

While conspiracy theories surrounding the 26/11 Mumbai attacks continue to circulate, the weight of evidence from official investigations supports the conclusion that Lashkar-e-Taiba was responsible for the attacks. It is essential to critically examine claims, consider the evidence, and rely on verified information to form a comprehensive understanding of historical events. False flag theories, while intriguing, should be approached with caution, taking into account the broader context and available evidence.

My personal Experience that day

On the 26th morning 2008 I booked 2 tickets from New Delhi to Hyderabad via Spice Jet for myself & a colleague for work. The traffic rush in Delhi resulted in us missing the evening flight. I decided to spend the night at the Delhi airport to take the next early morning flight. While at the airport lounge the live beaming on television captured the Taj Hotel attack which was live on all TV Channels. Early morning on 27th we reached Lakdi ka pul hotel which I had booked along with tickets Via make my trip website. After bath my college at room breakfast brought to my notice the sad news of the death of my friend , philosopher & guide the former Prime Minister of India Vishwanath Pratap Singh who remained always on the hotline with me. I am the only Journalist,Publisher, Editor to have had the honour of 20 plus exclusive interviews of him & had the role in shaping his policy for Indian Muslims. During mid-term elections of 1991 he wanted me to join which would have benefitted my newspaper & me politically & financially, but in my idealism I declined & told him I am happy being a Journalist.

His death had saddened me and a very personal loss of mine had happened. I searched for my laptop in my baggage to type a condolence message but found none. Reported the missing of my laptop to the hotel staff but they too were ignorant & the matter was reported to police, which arrived in minutes with a whole bunch of special forces, after scanning the hotel they took my details – checked Delhi airport asked me to call airport there to see if I had by mistake left it at the airport. On 26/11 Mumbai attack , death of V.P. Singh on 27th & now thiss loss of laptop & dealing with highly sensitive top intelligence force at the Airport authorities had put me in fix but for my connections. My laptop had multiple content on false flags plus such journalistic data & content which certainly would have made authorities spin on me.

I forgot the 26/11 & death condolence of V.P. Singh & by 11am left my hotel room for the police station to register an official complaint. Meantime my fiancee came to pick me up in the car. My colleague had left for his scheduled meeting. I too left. Along the way to PS I got the idea of calling the owner of Spicejet Ajay Singh once my colleague at media cell BJP in 1999. He happily recalled me & asked me to get in touch with Hyderabad head of his Airlines whose number he forwarded. Within one hour I was informed that my laptop is at Delhi airport as I during security check in had forgotten to pick it up , only had picked its bag without realising it had no laptop inside. Thanks to Ajay Singh he got it delivered to my Noida residence without any trouble of dealing with unnecessary harassment at the hands of police at the airport. On reaching back to Noida I found the laptop had reached before me.

Anyhow the UPA govt.was nailed by BJP hindutva hawks at playing anti-hindutva card via using US sponsored Pak-based LET operatives to attack Mumbai on 26/11 to create Islamophobia & US was creating a hindutva wave under Congress govt with active support of LET & Teesta Setalvad team, which back fired as Hindutva politics exerts @bjp finished the game started by Congress govt. In the process innocent Afzal Guru was hanged till death a legal murder to fulfill the fake national conscience of Brahmin rulers Islamophobia. Pakistan is & will always remain a US colony used by Zionists to strengthen the Mad Hindutva among all Indian political parties.

Sohail Siddiqui 

There remains not an iota of doubt that both 26/11 & 13/12 are false flags to help India turn right in Hindutva pocket & all this with active collaboration of US & it’s colony Pakistan. The only leader from India who had the power to challenge & change the politics of Islamophobia of India Zionists was V.P. Singh whose death gave open space to US & Israel to make India dance to its tune via Hindutva embedded BJP/Congress dancing on Corporate US-Israel’s Zionist New World Order. A salute to V.P. Singh whose statesmanship has till date has kept the hope of India – free of Zionists & fascist hindutva.

26/11 ممبئی حملوں کا پردہ فاش کرنا: جھوٹے پرچم کی سازش کی جانچ کرنا – واقعات کا ایک بیان از احمد سہیل صدیقی

تعارف:
26/11 کے ممبئی حملے، جسے 2008 کے ممبئی دہشت گرد حملے بھی کہا جاتا ہے، مربوط دہشت گردی کے واقعات کا ایک سلسلہ تھا جس نے ممبئی، ہندوستان کو ہلا کر رکھ دیا۔ تاہم، سازشی نظریات کے دائرے میں، کچھ افراد کا استدلال ہے کہ یہ حملے ایک جھوٹے فلیگ آپریشن تھے، جن کو سرکاری طور پر ذمہ دار ٹھہرائے جانے والے اداروں کے علاوہ دیگر اداروں نے ترتیب دیا تھا۔ اس مضمون میں، ہم 26/11 کے حملوں سے متعلق دعووں کا جائزہ لیں گے اور تجزیہ کریں گے کہ آیا جھوٹے فلیگ تھیوری کی حمایت کرنے کے لیے کوئی ٹھوس ثبوت موجود ہیں۔

فالس فلیگ آپریشنز کو سمجھنا:
جھوٹے فلیگ آپریشن سے مراد ایک ایسا واقعہ ہے جس میں ایک فریق کارروائی کرتا ہے لیکن اسے ایسا ظاہر کرتا ہے جیسے کوئی دوسرا فریق ذمہ دار ہو۔ ان کارروائیوں میں اکثر رائے عامہ کو ہیرا پھیری کرنے، سیاسی ایجنڈوں کو آگے بڑھانے، یا ردعمل کو اکسانے کے لیے دھوکہ دہی کے حربے شامل ہوتے ہیں۔ جھوٹے جھنڈے کے نظریات غیر معمولی نہیں ہیں، مختلف تاریخی واقعات میں سرکاری بیانیے پر شکوک و شبہات کا سوال کرتے ہیں۔

جھوٹے پرچم کے طور پر 26/11 کے دعوے:
26/11 کے حملوں کے حوالے سے جھوٹے فلیگ تھیوری کے حامی کئی دلائل پیش کرتے ہیں۔ کچھ کا دعویٰ ہے کہ ان حملوں کے جغرافیائی سیاسی مقاصد تھے، جو خطے کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کرنے والی بیرونی قوتوں کے ملوث ہونے کا اشارہ دیتے ہیں۔ دوسروں نے واقعات کے سرکاری اکاؤنٹس میں سمجھی جانے والی تضادات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے، حکومتی حکام کی طرف سے پیش کردہ بیانیہ پر سوال اٹھایا۔

جوابی دلائل اور سرکاری تحقیقات:
اگرچہ سازشی نظریات عوام کی توجہ حاصل کر سکتے ہیں، لیکن ان کا تنقیدی جائزہ لینا بہت ضروری ہے۔ ہندوستانی اور بین الاقوامی حکام کی طرف سے کی گئی تحقیقات نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ 26/11 کے حملے پاکستان میں مقیم عسکریت پسند گروپ لشکر طیبہ نے کیے تھے۔ پیش کیے گئے شواہد میں روکے گئے مواصلات، پکڑے گئے دہشت گردوں کے اعترافات اور حملوں کے دوران استعمال ہونے والے ہتھیاروں کا فرانزک تجزیہ شامل تھا۔

انٹیلی جنس ایجنسیوں کا کردار:
سازشی نظریات میں اکثر انٹیلی جنس ایجنسیوں کے کردار کے بارے میں قیاس آرائیاں شامل ہوتی ہیں۔ 26/11 کے حملوں کے معاملے میں، کچھ تھیورسٹ انٹیلی جنس ایجنسیوں کے اندر خفیہ عناصر کے ملوث ہونے کا مشورہ دیتے ہیں، یا تو فوجی کارروائی کا جواز پیش کرنے یا مخصوص سیاسی مقاصد کو آگے بڑھانے کے لیے۔ تاہم، ان دعوؤں کی حمایت کرنے والے ٹھوس شواہد اب بھی مضمر ہیں۔

میڈیا کا اثر اور عوامی تاثر:
عوامی تاثرات کی تشکیل میں میڈیا کے کردار کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ جب لوگ مرکزی دھارے کے بیانیے کی سچائی پر سوال اٹھاتے ہیں تو سازشی تھیوریز اکثر توجہ حاصل کرتے ہیں۔ 26/11 کے معاملے میں، میڈیا نے معلومات کو پھیلانے اور رائے عامہ کی تشکیل میں اہم کردار ادا کیا، سازشی نظریات کو پھیلانے میں اپنا کردار ادا کیا۔

نتیجہ:
اگرچہ 26/11 کے ممبئی حملوں کے بارے میں سازشی نظریات گردش کرتے رہتے ہیں، سرکاری تحقیقات سے شواہد کا وزن اس نتیجے کی تائید کرتا ہے کہ لشکر طیبہ حملوں کی ذمہ دار تھی۔ تاریخی واقعات کی جامع تفہیم کے لیے دعوؤں کا تنقیدی جائزہ لینا، شواہد پر غور کرنا، اور تصدیق شدہ معلومات پر انحصار کرنا ضروری ہے۔ فالس فلیگ تھیوریز، دلچسپ ہونے کے باوجود، وسیع تر سیاق و سباق اور دستیاب شواہد کو مدنظر رکھتے ہوئے، احتیاط کے ساتھ رابطہ کیا جانا چاہیے۔

اس دن میرا ذاتی تجربہ

26 ویں صبح 2008 کو میں نے اپنے اور کام کے لیے ایک ساتھی کے لیے اسپائس جیٹ کے ذریعے نئی دہلی سے حیدرآباد کے لیے 2 ٹکٹ بک کروائے تھے۔ دہلی میں ٹریفک کے رش کے نتیجے میں ہم شام کی پرواز سے محروم ہو گئے۔ میں نے اگلی صبح کی پرواز لینے کے لیے دہلی کے ہوائی اڈے پر رات گزارنے کا فیصلہ کیا۔ ہوائی اڈے کے لاؤنج میں ٹیلی ویژن پر لائیو بیمنگ نے تاج ہوٹل حملے کو اپنی گرفت میں لے لیا جو تمام ٹی وی چینلز پر لائیو تھا۔ 27 تاریخ کو صبح سویرے ہم لکڈی کا پل ہوٹل پہنچے جو میں نے اپنی ٹرپ ویب سائٹ کے ذریعے ٹکٹوں کے ساتھ بک کروایا تھا۔ نہانے کے بعد میرے کالج کے کمرے میں ناشتے میں میرے علم میں میرے دوست، فلسفی اور رہنما سابق وزیر اعظم ہند کی موت کی افسوسناک خبر آئی جو ہمیشہ میرے ساتھ ہاٹ لائن پر رہتے تھے۔ میں واحد صحافی، پبلشر، ایڈیٹر ہوں جس نے ان کے 20 سے زیادہ خصوصی انٹرویوز کا اعزاز حاصل کیا اور ہندوستانی مسلمانوں کے لیے ان کی پالیسی کو تشکیل دینے میں ان کا کردار تھا۔ اخبار اور مجھے سیاسی اور مالی طور پر، لیکن میں نے اپنے آئیڈیلزم سے انکار کر دیا اور کہا کہ میں صحافی بن کر خوش ہوں۔

ان کی موت نے مجھے دکھ پہنچایا اور میرا بہت ذاتی نقصان ہوا۔ میں نے تعزیتی پیغام ٹائپ کرنے کے لیے اپنے سامان میں اپنا لیپ ٹاپ تلاش کیا لیکن کوئی نہیں ملا۔ میرے لیپ ٹاپ کی گمشدگی کی اطلاع ہوٹل کے عملے کو دی لیکن وہ بھی لاعلم رہے اور اس معاملے کی اطلاع پولیس کو دی گئی، جو چند منٹوں میں خصوصی دستوں کے ساتھ پہنچ گئی، ہوٹل کو سکین کرنے کے بعد انہوں نے میری تفصیلات لے لی- دہلی ایئرپورٹ پر چیک کیا تو مجھ سے پوچھا۔ وہاں ہوائی اڈے پر کال کریں کہ آیا میں نے غلطی سے ہوائی اڈے کو چھوڑ دیا تھا۔ 26/11، وی پی کی موت سنگھ اور اب لیپ ٹاپ کا نقصان اور انتہائی حساس اعلیٰ انٹیلی جنس فورس اور ہوائی اڈے کے حکام کے ساتھ معاملہ کرنا۔ میرے لیپ ٹاپ میں جھوٹے جھنڈوں کے علاوہ صحافتی ڈیٹا اور مواد پر متعدد مواد موجود تھا جس نے یقینی طور پر حکام کو مجھ پر گھمایا ہوگا۔
میں 26/11 اور V.P کی موت کا تعزیت بھول گیا۔ سنگھ اور صبح 11 بجے تک میرے ہوٹل کے کمرے سے پولیس اسٹیشن کے لیے سرکاری شکایت درج کرنے کے لیے نکلے۔ اسی دوران میری منگیتر مجھے گاڑی میں لینے آئی۔ میرا ساتھی اپنی طے شدہ میٹنگ کے لیے روانہ ہو چکا تھا۔ میں بھی چلا گیا۔ PS کے راستے میں مجھے سپائس جیٹ کے مالک اجے سنگھ کو کال کرنے کا خیال آیا جو 1999 میں میڈیا سیل بی جے پی میں میرے ایک ساتھی تھے۔ اس نے خوشی خوشی مجھے واپس بلایا اور اپنی ایئر لائنز کے حیدرآباد کے سربراہ سے رابطہ کرنے کو کہا۔ جس کا نمبر اس نے فارورڈ کیا تھا۔ ایک گھنٹے کے اندر مجھے اطلاع ملی کہ میرا لیپ ٹاپ دہلی کے ہوائی اڈے پر ہے کیونکہ میں سیکیورٹی چیک ان کے دوران اسے اٹھانا بھول گیا تھا، صرف اس کا بیگ اٹھایا تھا بغیر یہ کہ اس میں کوئی لیپ ٹاپ نہیں تھا۔ اجے سنگھ کا شکریہ کہ اس نے اسے میری نوئیڈا کی رہائش گاہ پر پہنچایا اور بغیر کسی پریشانی کے ہوائی اڈے پر پولیس کے ہاتھوں غیر ضروری ہراسانی سے نمٹا گیا۔ نوئیڈا واپس پہنچنے پر میں نے دیکھا کہ لیپ ٹاپ مجھ سے پہلے پہنچ چکا ہے۔

بہرحال یو پی اے حکومت کو بی جے پی کے ہندوتوا بازوں نے ہندوتوا مخالف کارڈ کھیلنے پر امریکہ کی سرپرستی میں پاکستان میں مقیم ایل ای ٹی کے کارندوں کا استعمال کرتے ہوئے 26/11 کو ممبئی پر حملہ کرکے اسلامو فوبیا پیدا کرنے کی کوشش کی اور امریکہ کانگریس حکومت کے تحت ہندوتوا لہر پیدا کر رہا ہے۔ LET اور تیستا سیتل واڑ کی ٹیم، جس نے جوابی فائرنگ کی کیونکہ ہندوتوا کی سیاست @bjp نے کانگریس حکومت کی طرف سے شروع کی گئی گیم کو ختم کر دیا۔ اس عمل میں برہمن حکمرانوں کے اسلامو فوبیا کے جعلی قومی ضمیر کو پورا کرنے کے لیے بے گناہ افضل گرو کو موت تک پھانسی پر لٹکا دیا گیا۔ پاکستان ہمیشہ امریکی کالونی ہے اور رہے گا جسے صیہونیوں نے تمام ہندوستانی سیاسی جماعتوں میں پاگل ہندوتوا کو مضبوط کرنے کے لیے استعمال کیا ہے۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ 26/11 اور 13/12 دونوں جھوٹے جھنڈے ہیں جو ہندوستان کو ہندوتوا کی جیب میں دائیں طرف مڑنے میں مدد کرتے ہیں اور یہ سب کچھ امریکہ اور اس کی کالونی پاکستان کے فعال تعاون سے ہے۔ ہندوستان کا واحد رہنما جس کے پاس ہندوستان کے صیہونیوں کی اسلامو فوبیا کی سیاست کو چیلنج کرنے اور تبدیل کرنے کی طاقت تھی وہ V.P. سنگھ جن کی موت نے امریکہ اور اسرائیل کو کارپوریٹ US-اسرائیل کے صیہونی نیو ورلڈ آرڈر پر ہندوتوا ایمبیڈڈ بی جے پی/کانگریس کے ذریعے ہندوستان کو اپنی دھن پر رقص کرنے کے لئے کھلی جگہ فراہم کی۔ وی پی کو سلام سنگھ جن کی مدبرانہ صلاحیتوں نے آج تک ہندوستان کی امید کو صیہونیوں اور فاشسٹ ہندوتوا سے پاک رکھا ہے۔

https://www.indiatoday.in/india/video/15-years-of-2611-remembering-horrific-mumbai-attacks-2467569-

2023-11-25

https://www.aajtak.in/india/video/former-prime-minister-vp-singh-died-80118-2008-11-27

*****

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Shopping Cart